کینیڈا

یوکرین کے کچھ حصوں کو ضم کرنے کے روس کے منصوبے سے کینیڈا کے وزیر دفاع ‘ناراض’

رواں ماہ یوکرین کی جانب سے جوابی کارروائی کے بعد ماسکو کی افواج کو شدید دھچکا لگا تھا، روس نے کہا تھا کہ وہ اس لڑائی میں شامل ہونے کے لیے تین لاکھ فوجیوں کو طلب کرے گا۔ اس نے یہ بھی متنبہ کیا کہ وہ جوہری ہتھیاروں کا سہارا لے سکتا ہے۔

کینیڈا کے قومی وزیر دفاع نے روسی صدر ولادیمیر پیوٹن کی جانب سے جمعے کے روز یوکرین کے چار علاقوں کو باضابطہ طور پر ضم کرنے کا ارادہ ظاہر کیے جانے کی خبروں سے ‘ناراض’ ہیں۔

کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے جمعرات کو نامہ نگاروں کو بتایا کہ پیوٹن، جمعے کو کریملن میں ایک تقریب میں شرکت کریں گے جب یوکرین کے چار پسماندہ علاقوں کو باضابطہ طور پر روس میں جوڑ دیا جائے گا۔

انیتا آنند نے جمعرات کے روز ایک ورچوئل نیوز کانفرنس کے دوران نامہ نگاروں کو بتایا کہ "میں پورے دل سے اس بات سے اتفاق کرتی ہوں کہ ریفرنڈم ایک دکھاوا تھا اور الحاق مکمل طور پر غیر منصفانہ اور بین الاقوامی قوانین پر مبنی آرڈر کے منافی ہے۔

کینیڈا ان اقدامات کی مذمت کرتا ہے اور میں ذاتی طور پر ان سے ناراض ہوں کیونکہ یہ قابل مذمت ہیں اور یوکرین کی علاقائی سالمیت اور خودمختاری میں مکمل طور پر غیر ضروری اور غیر قانونی مداخلت ہے۔

یوکرین میں روسی قبضے والے علاقوں میں منگل کے روز ختم ہونے والے ووٹوں کے بعد ایک سرکاری الحاق کی وسیع پیمانے پر توقع کی جارہی تھی۔

جنوبی اور مشرقی یوکرین کے چار خطوں میں ماسکو کی قائم کردہ انتظامیہ نے منگل کی رات دعویٰ کیا کہ زاپوریژیا کے علاقے میں ڈالے گئے 93 فیصد ووٹوں نے الحاق کی حمایت کی، جیسا کہ کھیرسن کے علاقے میں 87 فیصد، لوہانسک کے علاقے میں 98 فیصد اور ڈونیٹسک میں 99 فیصد نے کیا۔

امریکہ اور اس کے بہت سے مغربی اتحادیوں نے ان ووٹوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے ‘دکھاوا’ قرار دیا ہے اور اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ وہ ان کے نتائج کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے۔ وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے بدھ کے روز یوکرین کے صدر ولودیمیر زیلنسکی کو ایک فون کال میں بتایا کہ کینیڈا روس کے اعلان کو تسلیم نہیں کرے گا اور یوکرین کی حمایت کرے گا۔

مسلح فوجی 23 ستمبر اور 27 ستمبر کو ووٹنگ کے خاتمے پر بیلٹ جمع کرنے کے لئے انتخابی عہدیداروں کے ساتھ گھر گھر گئے تھے۔ یوکرین میں شرمناک فوجی نقصانات کے بعد تیزی سے آنے والی روسی قیادت کی طرف سے زمین پر قبضہ کرنے کے حق میں مشکوک طور پر اعلی مارجن کی نشاندہی کی گئی تھی۔

رواں ماہ یوکرین کی جانب سے جوابی کارروائی کے بعد ماسکو کی افواج کو شدید دھچکا لگا تھا، روس نے کہا تھا کہ وہ اس لڑائی میں شامل ہونے کے لیے تین لاکھ فوجیوں کو طلب کرے گا۔ اس نے یہ بھی متنبہ کیا کہ وہ جوہری ہتھیاروں کا سہارا لے سکتا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
adana eskort - eskort adana - mersin eskort - eskort mersin - eskort - adana eskort bayan - eskort bayan adana - mersin eskort bayan -

diyetisyen

- SEO