کینیڈا

افغانستان کے متعدد بحرانوں کے پیش نظر کینیڈا کو طالبان کی پابندیوں میں نرمی کرنی چاہیے: امدادی گروپ

بڑے انسانی حقوق کے گروپوں نے ٹروڈو حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ افغانستان میں طالبان کے ساتھ کام کرنے پر عائد پابندیوں میں نرمی کرے۔

کینیڈین ریڈ کراس، آکسفیم کینیڈا اور ایمنسٹی انٹرنیشنل ان 18 گروپوں میں شامل ہیں جو یہ دلیل دے رہے ہیں کہ اوٹاوا طالبان حکومت کو الگ تھلگ کرتے ہوئے انسانی امداد کے لیے خامیاں تلاش کرنے میں اپنے ساتھیوں سے پیچھے رہ گیا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ کینیڈا کی پابندیاں افغانستان میں انسانی المیے پر ان کے ردعمل کو روک رہی ہیں۔

طالبان نے اگست 2021 میں افغانستان کا کنٹرول سنبھال لیا تھا۔

ایک اندازے کے مطابق ملک میں 23 ملین افراد کو خوراک کی قلت کا سامنا ہے ، جو خشک سالی ، صحت کی خدمات کی خرابی اور معیشت کی وجہ سے آزادانہ زوال کا شکار ہے۔

امدادی گروپوں کا کہنا ہے کہ کرمنل کوڈ میں انسداد دہشت گردی کے قوانین کینیڈا کے گروہوں کو گوداموں سے باہر اور فوری ضرورت مند افراد کے ہاتھوں میں سامان پہنچانے سے روک رہے ہیں۔

جون میں افغانستان میں انسانی بحران کا جائزہ لینے کے لیے قائم کی گئی ہاؤس آف کامنز کی ایک خصوصی کمیٹی نے کہا تھا کہ اوٹاوا کو ان قوانین میں ترمیم کرنے کی ضرورت ہے۔

اس کمیٹی نے نوٹ کیا کہ امریکہ، آسٹریلیا، برطانیہ اور یورپی یونین نے ملک میں امداد حاصل کرنے کے طریقے تلاش کیے ہیں۔

لبرلز نے اس رپورٹ پر کوئی باضابطہ ردعمل جاری نہیں کیا ہے، جس کی وجہ سے امدادی گروپوں نے اس رپورٹ کی مذمت کی ہے جسے وہ "فوری طور پر مایوس کن کمی” قرار دیتے ہیں۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
adana eskort - eskort adana - mersin eskort - eskort mersin - eskort - adana eskort bayan - eskort bayan adana - mersin eskort bayan -

diyetisyen

- boşanma avukatı - SEO