پاکستان

بھارت میں وی پی این استعمال کرکے آر ایم ایکس 1971 ڈیوائس سےای میل میں نیوزی لینڈ ٹیم کو دھمکی دی گئی

فواد چوہدری اور شیخ رشید پریس کانفرنس کررہے تھے

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد حسین چوہدری نے نیوزی لینڈ کی ٹیم کا دورہ پاکستان منسوخ ہونے کے ’پس پردہ حقائق‘ پر بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں موجود نیوزی لینڈ کی ٹیم کو جس جعلی ای میل کے ذریعے ’دھماکے‘ کے ذریعے حملے کی دھمکی دی گئی وہ بھارت میں وی پی این استعمال کرکے آر ایم ایکس 1971 ڈیوائس سے بھیجی گئی تھی اور اس کی لوکیشن سنگاپور ظاہر ہورہی تھی۔

وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید کے ہمراہ پریس کانفرنس کے دوران انہوں نے کہا کہ انٹرل پول سے معاونت طلب کرنے کے بعد ہمیں جو تفصیلات موصول ہوئیں اس کے مطابق جعلی ای میل ایڈریس حمزہ آفریدی کے نام سے بنائی گئی اور اس کے 13 منٹ بعد دھمکی آمیز ای میل نیوزی لینڈ کی ٹیم کو بھیجی گئی۔

انہوں نے کہا کہ آر ایم ایکس 1971 ڈیوائس سے مجموعی طورپر 13 ای میل ایڈریس جنریٹ کیے گئے لیکن ان میں صرف ایک کا نام ’حمزہ آفریدی‘ رکھا گیا تاکہ پاکستان سے اس کا تعلق ظاہر کیا جاسکے۔

فواد چوہدری نے بتایا کہ یہ ڈیوائس اگست 2019 میں بھارت میں متعارف کرائی گئی، 25 ستمبر 2019 میں موبائل سم رجسٹرڈ ہوئی تھی۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے بتایا کہ ’ڈیوائس بھارتی شہری اوم پرکاش میشرا کے نام پر تھی جو مہاراشٹر سے تعلق رکھتا ہے اور اسی ڈیوائس پر جعلی آئی ڈی بنائی گئی جسے ’حمزہ آفریدی‘ کا نام دیا گیا۔

’انٹرپول سے معاملے میں معاونت طلب کی ہیں‘

وفاقی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ ملک میں ہمیں ہائبرڈ وار اور ففتھ جنریشن وار کا سامنا ہے، کرکٹ سیریز کی منسوخی کے معاملے پر انٹر پول سے معاملے میں معاونت طلب کی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب نیوزی لینڈ کی ٹیم کا دورہ پاکستان منسوخ ہورہا تھا تب ایس سی او کا اجلاس جاری تھا اور وزیراعظم کی تقریب سے 15 منٹ پہلے ہمیں اطلاع ملی لیکن مشاورت کے بعد فیصلہ کیا کہ وزیر اعظم کو فوری آگاہ نہیں کیا جائے تاکہ وہ پریشان نہ ہوں۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) اور جماعت الاحرار کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کے جعلی نام سے 19 اگست 2021 کو فیس بک پوسٹ سامنے آتی ہے جس میں نیوزی لینڈ اور اس کی حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ دورہ پاکستان منسوخ کردے کیونکہ آئی ایس کے پی نے ٹیم پر حملے کا منصوبہ بنایا ہے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ ’اس کے بعد 21 اگست 2021 کو بھارتی ویب سائٹ سنڈے گارڈین ابھی نندن میشرا کے بیورو چیف نے ایک آرٹیکل شائع کیا نیوزی لینڈ ٹیم پاکستان میں دہشت گردی کا شکار ہوسکتی ہے‘۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ ’ابھی نندن میشرا کے افغانستان کے سابق نائب صدر امراللہ صالح سے بہت قریبی تعلقات ہیں اور امر اللہ صالح پاکستان مخالف ہونے کے حوالے سے مشہور ہیں‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اس کے چند دن بعد نیوزی لینڈ کے کھلاڑی مارٹن گپٹل کی اہلیہ کو ایک ای میل موصول ہوتی ہے کہ جس میں اطلاع دی جاتی ہے کہ مارٹن گپٹل کو دورہ پاکستان میں قتل کردیا جائے گا‘۔

انہوں نے کہا کہ ’جب تحقیق کی تو معلوم ہوا کہ جس ای میل ایڈریس سے مارٹن گپٹل کی اہلیہ کو ای میل کی گئی وہ کسی بھی سوشل میڈیا نیٹ ورک سے منسلک نہیں تھی، کسی ایس این ایم سے تعلق نہیں تھا، یہ ای میل ایڈریس 24 تاریخ رات 5 بجے بنایا گیا اور 11 بجے ان کی اہلیہ کو ای میل کی گئی‘۔

فواد چوہدری نے کہا کہ اس ای میل سے اب تک صرف ایک ہی ای میل کی گئی جو مارٹن گپٹل کی اہلیہ کو کی گئی تھی، دراصل ای سی پروٹون سرور سے کی گئی جس کی تفصیلات عام حالات میں دستیاب نہیں ہوتیں اس لیے ہم نے انٹرپول سے اس ای میل سے متعلق معلومات طلب کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس صورتحال کے باوجود نیوزی لینڈ ٹیم نے اپنا دورہ منسوخ نہیں کیا کیونکہ دونوں ممالک کی ایجنسیوں نے دھمکی پر مبنی ای میل کو جعلی قرار دے دیا تھا، نیوزی لینڈ کی ٹیم پاکستان پہنچی اور انہیں غیر معمولی سیکیورٹی فراہم کی گئی اور انہوں 13 تاریخ کو پہلی پریکٹس کی۔

انہوں نے کہا کہ 17 تاریخ کو جس دن میچ ہونا تھا، صبح کے وقت نیوزی لینڈ کی ٹیم نے اپنی حکومت کا حوالہ دے کر کہا کہ سیکیورٹی خدشات ہیں اس لیے دورہ منسوخ کررہے ہیں، متعلقہ حکام نے کیویز ٹیم سے سیکیورٹی خدشات شیئر کرنے کا بھی کہا لیکن وہ اس بارے میں اتنے ہی نابلد تھے جتنے ہم تھے کیونکہ سیکیورٹی خدشات یہاں نہیں تھے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ اس دوران ہم نے وزیر اعظم کو نیوزی لینڈ کے دورے سے متعلق آگاہ کیا اور ہماری درخواست پر عمران خان نے نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم سے بات کی جس میں جیسنڈا آرڈرن نے کہا کہ ’اہم معلومات‘ موصول ہوئی ہیں اور کھلاڑیوں کی حفاظت سب سے اہم ہے۔

جنوبی افریقہ کی کرکٹ ٹیم دسمبر میں پاکستان آرہی اور ابھی سے انہیں دھمکی آمیز ای میل مل چکی ہے اور جس ای میل سے انہیں دھمکی دی گئی تو احسان اللہ احسان کے نام پر جنریٹ کیا گیا ای امیل ایڈریس ہے لیکن اس مرتبہ اس کے نام کی اسپیلنگ مختلف ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ مایوس کن صورتحال ہے کیونکہ بھارت کی جانب پاکستان کو بدنام کرنے کی مہم نہیں بلکہ انٹرنیشنل کرکٹ کو داغ دار کرنے کی سازش ہے۔

فواد چوہدری نے کہاکہ آئی سی سی سمیت متعلقہ عالمی اداروں کو لازمی نوٹس لینا چاہیے۔

انہوں نے جنوبی افریقہ کو مخاطب کرکے کہا اگر انہیں کسی بھی قسم کی دھمکی یا سیکیورٹی خدشات ہیں تو براہ راست ہم سے شیئر کریں۔

نیوزی لینڈ سے سفارتی تعلقات ختم کرنے سے متعلق سوال کے جواب میں وفاقی وزیر نے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ نیوزی لینڈ موجودہ حقائق سامنے آنے کے بعد ایک مؤقف اختیار کرے گی جبکہ برطانوی سفیر از خود کہہ چکے ہیں کہ ٹریول ایڈوائزری میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی جبکہ انگلشن بورڈ اعتراض کرنے کا مجاز نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی وی اسپورٹس ہونے والے نقصان کا جائزہ لے رہے ہیں اور اگر قانونی ماہرین نے اجازت دی تو انگلینڈ میں برطانوی ٹیم پر مقدمہ درج کرائیں گے۔

وہ دن دور نہیں جب دنیا کی ٹیمیں پاکستان آئیں گی، شیخ رشید

وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے نیوزی لینڈ اور برطانوی کرکٹ ٹیم کے دورہِ پاکستان منسوخ ہونے کے حوالے سے کہا ہے کہ مایوسی کفر ہے، ایک وقت آئے گا جب دنیا بھر کی ٹیمیں پاکستان آنے کی خواہش ظاہر کریں گی۔

اسلام آباد میں وزیر اطلاعات فواد چوہدری کے ہمراہ پریس کانفرنس کے دوران انہوں نے کہا کہ بھارت ایسا تاثر دے رہا ہے کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ ختم ہوگئی ہے، وہ میڈیا کے ذریعے جعلی خبریں پھیلا رہا ہے اور بہت جلد منہ کی کھائے گا۔

شیخ رشید نے کہا کہ ’میں یہ پیغام لے کر آیا ہوں کہ ہم زندہ قوم ہیں اور تنہا نہیں کیے جا سکتے، ہمیں نظر انداز نہیں کیا جا سکتا، آنے والے دن پاکستان کے ہیں اور وزیر اعظم عمران خان کی قیادت میں ملک کو مزید ترقی دینے کے لیے کوشاں رہیں گے‘۔

نیوزی لینڈ، انگلینڈ کے دورے منسوخ

واضح رہے کہ دو روز قبل انگلش کرکٹ بورڈ نے اگلے ماہ اپنی مرد اور خواتین کی کرکٹ ٹیموں کو پاکستان بھیجنے کے فیصلے سے دستبرداری کا اعلان کیا تھا۔

انگلش کرکٹ بورڈ نے پاکستان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ ‘خطے میں سفر کے حوالے سے ہمارے خدشات میں اضافہ ہو رہا ہے اور ہمارا ماننا ہے کہ اگر ہم یہ دورہ جاری رکھتے ہیں تو اس سے ہمارے کھلاڑیوں پر دباؤ بڑھے گا جو پہلے کووڈ-19 کے پابندیوں کے ماحول سے نمٹنے کی کوششوں میں مصروف ہیں’۔

بیان میں کہا گیا کہ ‘ہمارے کھلاڑیوں اور سپورٹ اسٹاف کی ذہنی اور جسمانی صحت کی نگہداشت ہماری اولین ترجیح ہے اور ہم جن موجودہ حالات سے گزر رہے ہیں اس میں یہ مزید اہمیت اختیار کر جاتی ہے’۔

اس سے قبل جمعہ کو نیوزی لینڈ نے پنڈی کرکٹ اسٹیڈیم میں سیریز کے پہلے ایک روزہ میچ سے چند لمحے قبل ہی ‘سیکیورٹی خطرے’ کے باعث دورہ منسوخ کرنے کا اعلان کیا تھا۔

پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیف ایگزیکٹو (سی ای او) وسیم خان نے کہا کہ نیوزی لینڈ کی حکومت نے دورہ پاکستان انٹیلیجنس گروپ ‘فائیو آئیز’ کی جانب سے ان کی ٹیم کو ‘براہ راست’ خطرے کا الرٹ موصول ہونے پر ختم کیا۔

فائیو آئیز انٹیلی جنس اتحاد ہے جس میں آسٹریلیا، کینیڈا، نیوزی لینڈ، امریکا اور برطانیہ شامل ہیں۔

ان دوروں کی منسوخی کو صحافیوں، سیاستدانوں، کھلاڑیوں اور کمنٹیٹرز سمیت پاکستان میں مختلف شعبہ ہائے زندگی کی طرف سے تنقید کا نشانہ بنایا گیا اور صورتحال پر افسوس کا اظہار کیا گیا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button