دنیا

جوہری تنازع: ایران کی ‘آئی اے ای اے’ کے سربراہ کو مذاکرات کی دعوت

دو سفارتکاروں نے کہا کہ وہ ایٹمی توانائی کی تنظیم کے نئے سربراہ محمد اسلامی سے اتوار کو ملاقات کریں گے

ویانا: اقوام متحدہ میں جوہری پروگرام کے نگراں رواں ہفتے ایران کے ساتھ مذاکرات کے لیے دورے پر تہران روانہ ہوں گے تاکہ ایران اور مغربی ممالک کے مابین جوہری پروگرام پر تنازع کو کم اور جوہری معاہدے کو بحال کیا جا سکے۔

رپورٹ کے مطابق سربراہ رافیل گروسی رواں ہفتے کے آخر میں تہران پہنچیں گے۔

بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کے معاملات پر گہری نظر رکھنے والے تین سفارتکاروں نے کہا کہ آئندہ ہفتے آئی اے ای اے کے 35 ملکوں کے بورڈ آف گورنرز کے اجلاس سے قبل رافیل گروسی تہران کا دورہ کریں گے۔

دو سفارتکاروں نے کہا کہ وہ ایٹمی توانائی کی تنظیم کے نئے سربراہ محمد اسلامی سے اتوار کو ملاقات کریں گے۔

بعدازاں آئی اے ای اے اور ایجنسی میں ایران کے ایلچی نے دورے اور ملاقات سے متعلق تفصیلات کی تصدیق کی۔

آئی اے ای اے نے کہا کہ ڈائریکٹر جنرل رافیل ماریانو گروسی اتوار کو تہران میں ایران کے نائب صدر اور اے ای او آئی کے سربراہ محمد اسلامی سے ملاقات کریں گے۔

آئی اے ای اے نے رواں ہفتے رکن ممالک کو آگاہ کیا تھا کہ دو مرکزی مسائل پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے، امریکا اور ایران کے مابین جوہری معاہدے کی بحالی کا معاملہ جون سے زیر التوا ہے۔

دوسری جانب واشنگٹن اور اس کے یورپی اتحادی ممالک ایران کے نو منتخب صدر ابراہیم رئیسی پر دباؤ ڈال رہے ہیں کہ وہ جوہری معاہدے پر دوبارہ مذاکرات کا آغاز کریں۔

یاد رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہر معاہدے سے دستبرداری اور ایران پر پابندی کے فیصلے کے بعد ایران اور امریکا کے درمیان دہائیوں سے جاری کشدگی میں شدت آگئی تھی۔

امریکا میں 3 نومبر 2020 کو ہوئے صدارتی انتخاب میں فتح حاصل کرنے والے جوبائیڈن نے جوہری معاہدے میں واپسی کے اشارے دیے ہیں جو 20 جنوری کو امریکا کے صدر کی حیثیت سے منصب سنبھال لیں گے۔

امریکا کے نو منتخب صدر نے عندیہ دیا تھا کہ وہ معاہدے میں واپسی کے بعد ایران کے ساتھ واضح انداز میں بات کرنا چاہتے ہیں جس میں خاص کر میزائل اور مشرق وسطیٰ سمیت خطے میں اثر رسوخ شامل ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button